ورلڈکپ کی تیاری،خواری ہی خواری

ورلڈکپ کی تیاری کے سلسلے میں پاکستان کی تجرباتی ٹیم کے لیے آسٹریلیا کے خلاف سیریز ڈراؤنا خوب ثابت ہوئی،نوجوان کھلاڑیوں پر مشتمل قومی ٹیم ایک بھی میچ میں کامیابی حاصل نہیں کرسکی، سینئرز کے ساتھ ساتھ نوجوان کھلاڑی بھی متاثر کن کارکردگی نہ دکھا پائے۔
سیریز کے آخری میچ میں کینگروز کے 328 رنز کے جواب میں گرین شرٹس کے بلے بازوں نے نسبتاً زیادہ مزاحمت کا مظاہرہ کیا لیکن کامیابی کے ساتھ میچ فنش نہ کرنے کی روایت کو برقرار رہی اور پاکستانی ٹیم مقررہ 50 اوورز میں 7 وکٹوں پر 307 رنز تک محدود رہی، مڈل آرڈر بیٹسمین حارث سہیل کے 130، شان مسعود اور عماد وسیم کی نصف سنچریاں بھی ٹیم کو شکست سے نہ بچا سکیں۔
گزشتہ میچ کے ہیرو عابد علی صفر، محمد رضوان 12، عمر اکمل 43، سعد علی 4، یاسر شاہ 11 رنز پر پویلین لوٹے جب کہ آسٹریلیا کی جانب سے بہرینڈروف نے سب سے زیادہ 3 وکٹیں حاصل کیں، رچرڈسن، لائن، میکسویل اور زمپا کے حصے میں ایک ایک وکٹ آئی۔
اس سے قبل قومی ٹیم کے کپتان عماد وسیم نے ٹاس جیت کر آسٹریلیا کو بیٹنگ کی دعوت دی، کینگروز بلے بازوں نے پراعتماد بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ اوورز میں 7 وکٹوں پر 327 رنز بنائے۔ ایرون فنچ اور عثمان خواجہ نے ٹیم کو 134 رنز کا عمدہ آغاز فراہم کیا،ایرون فنچ نے 53 رنز بنانے جب کہ عثمان خواجہ 98 رنز پر آؤٹ ہوئے۔مڈل آرڈر بیٹسمین شان مارش 61، میکسویل 70 کی دھواں دار اننگ کھیلی۔ پاکستان کی جانب سے عثمان شنواری نے سب سے زیادہ 4 اور جنید خان نے 3 وکٹیں حاصلکیں۔
یو اے ای کے گرائونڈز پر پاکستان کی ہوم سیریز میں پاکستانی بیٹسمینوں نے پانچ میچوں کے دوران پانچ سنچریاں بنائی مگر ٹیم ایک بھی میچ میں کامیاب نہ ہوسکی۔ اس سے قبل آسٹریلیا 2009-10 کی پانچ میچوں کی ہوم سیریز کے دوران بھی پاکستان کو وائٹ واشن کرچکا ہے۔ دبئی اسٹیڈیم پر کھیلے گئے پانچویں میچ میں آسٹریلیا نے پاکستان کو 328 رنز کا ہدف دیاجو سیریز کے دوران کسی بھی ٹیم کا 300 یا اس سے زائد کا پہلا ہدف تھا

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.