افغان امن مذاکرات کیلئے کوششیں تیز

افغان حکومت نے امن مذاکرات کے لیے عبدالسلام رحیمی کی سربراہی میں 22 اراکین پر مشتمل مذاکراتی ٹیم تشکیل دیدی جو14 اور 15 اپریل کو قطر میں طالبان نمائندوں سے مذاکرات کرے گی۔افغان حکومت کے ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس میں امن مذاکراتی ٹیم کے اراکین کا انتخاب کیا گیا جبکہ 37 اراکین پر مشتمل قومی مفاہمتی کونسل کے قیام کا بھی فیصلہ کیا گیا جو اندرونی اور بیرونی اسٹیک ہولڈرز سے ہونے والے مذاکرات کی نگرانی کرے گی۔
مذاکراتی کمیٹی اورمفاہمتی کونسل مشترکہ طور پر افغانستان میں جاری خانہ جنگی کے خاتمے اور سیاسی مفاہمت کے لیے اپنا کردار ادا کریں گی اور اس حوالے سے تمام فریقین بشمول پاکستان،سعودی عرب، امریکا اور قطر کی قیادت سے بھی رابطے کیے جائیں گے۔
دوسری جانب امریکی نمائندہ خصوصی زلمے خلیل زاد کا کہنا ہے کہ قطرمیں ہونے والی طالبان اور افغان وفد ملاقات میں افغان معاشرے کا ہر فرد شریک ہوگا۔ان کا کہنا تھا کہ افغانوں سے مل کر دیگر فریقین اور افغان معاشرے کے ساتھ کام کرنے کا ربط بن گیا ہے ،اب طالبان اورافغان حکام کے اجلاس کا انتظار ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.