1947ء سے2018ء تک بیرونی قرض 37 ارب ڈالر

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ 1947 سے 2008 تک پاکستان کا کل بیرونی قرضہ 37 ارب ڈالر رہا، اس رقم سے اسلام آباد بنا،،،،تربیلاڈیم بنا،،، منگلا ڈیم بنا،نیول بیسز بنیں،،،فوج کو جدید ہتھیاروں سے لیس کیاگیا،،،گوادر بنا، موٹر وے بنی۔ اس کے برعکس 2008 سے 2018 تک بیرونی قرضہ 97 ارب ڈالر پر پہنچ گیا یعنی دس سالوں میں 60 ارب کا اضافہ ہوافواد چودھری نے سوال اٹھایا کہ آخر یہ پیسہ گیا کہاں ؟؟؟ یہ پیسہ دو خاندانوں نے آپس میں تقسیم کیا، دونوں حکمران خاندانوں نے حدیبیہ فراڈ کا ماڈل بار بار استعمال کیا،،،پیسہ ہنڈی اور حوالہ سے باہر بھیجا گیا اور گھمایا گیا، جعلی اکاؤنٹس اور جعلی لوگ استعمال ہوئے،،انہوں نے کہا کہ نواز شریف، شہباز شریف اور زرداری تماشے کے مرکزی کردار ہیں جبکہ سائیڈ رول والے درجنوں افراد ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.