سندھ حکومت کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے

صحرائے تھر میں معصوم بچوں کی زندگی دم توڑنے لگی ۔جس کی وجہ غذائیت کی کمی اور صحت کی سہولیات کا فقدان ہے۔ تھرپارکر کے سرکاری ہسپتالوں میں غذائیت کی کمی اور مختلف امراض سے 9 بچے جاں بحق ہو گئے۔جس کے بعد رواں ماہ مرنے والے بچوں کی تعداد 54 ہو گئی ہے جبکہ رواں سال میں کل 757 بچے جاں بحق
ہو ئے ہیں ۔سول ہسپتال مٹھی سمیت تحصیل ہسپتالوں اور دیہاتی علاقوں میں بنی ڈسپینسریز میں بھی صحت کی سہولیات کا فقدان ہے۔ہر سال بچوں کی غذائی قلت اور طبی سہولیات کی عدم فراہمی کے باعث اموات کے باوجود سندھ حکومت کی ہٹ دھرمی افسوسناک حد تک بر قرار ہے ۔وفاقی حکومت کے اعلانات پر بھی عملی کام نہیں ہو سکا۔
شاید آپ یہ بھی پسند کریں

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.