پہلے قیدیوں کی رہائی پھر جنگ بندی

0

افغان صدر اشرف غنی نے گزشتہ روز طالبان سے ماہ مقدس کے دوران کارروائیاں روک دینے کی اپیل کی تھی تاہم طالبان قیدیوں کی رہائی کی حکومتی پالیسی سے نالاں ہیں، طالبان ترجمان سہیل شاہین کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کی وجہ سے ہزاروں قیدیوں کی جانوں کو خطرہ ہے اور ایسے وقت میں جنگ بندی کا مطالبہ کرنا کسی طور معقول ہے اور نہ ہی اس کی کوئی منطق ہے۔
دوسری جانب افغانستان کی سلامتی کونسل کے ترجمان جاوید فیصل کے مطابق افغان حکومت نے اب تک ملک کے 18 صوبوں سے 550 طالبان قیدیوں کورہا کیا ہے رہائی پانے والے قیدیوں میں سے 58 کو جمعرات کو رہا کیا گیا جبکہ طالبان اب تک افغان حکومت کے 60 قیدی رہا کئے ہیں۔
ادھر افغانستان میں طالبان جنگجوؤں نے فوجی چیک پوسٹ پر دھاوا بول دیا جس کے نتیجے میں 13 اہلکار اور متعدد زخمی ہوگئے۔افغان میڈیا کے مطابق صوبے بادغیس کے فوجی چیک پوسٹ پر طالبان جنگجوؤں نے حملہ کردیا، سیکیورٹی اہلکاروں نے ایک گھنٹے تک سخت مزاحمت کی لیکن چند اہلکاروں کے جنگجوؤں سے جا ملنے پر سیکیورٹی اہلکار پسپا ہوگئے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: