کرونا کیسزمیں اضافہ،عالمی تنقید سب بے سود

0

سویڈن کا شماران چند ممالک میں ہوتا ہے جو اپنے ہاں کرونا وائرس کے مریض بڑھنے کے باوجود لاک ڈاؤن نہ کرنے پر بضد ہیں اور گزشتہ ڈیڑھ ماہ سے کرونا کیسز میں مزید اضافہ دیکھا جا رہا ہے اس کے باوجود سویڈن نے دیگر پڑوسی ممالک کے بر عکس اپنے ہاں لاک ڈاؤن کا نفاذ نہیں کیا تاہم شہریوں کو ذمہ داری کا مظاہرہ کرنے کی ہدایت کی ہے۔اس وقت سویڈن میں تمام سرگرمیاں معمول کے مطابق جاری ہیں اور وہاں پر نہ صرف کافی شاپ کھلی ہوئی ہیں بلکہ وہاں شراب خانوں سمیت جوا خانے بھی کھلے ہوئے ہیں۔ سویڈن کی حکومت نے لوگوں کو تجویز دی ہے کہ وہ گھروں سے بیٹھ کر کام کریں اور باہر جانے کے بعد ایک دوسرے سے دوری اختیار کریں جب کہ 70 سال سے زائد عمر کے لوگ گھروں سے نہ نکلیں تو اچھا ہے۔کرونا وائرس کے کیسز بڑھنے کے باوجود وہاں لاک ڈاؤن نافذ نہ کیے جانے پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سویڈن کی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا اور کہا تھا کہ حکومت لاک ڈاؤن نہ کرکے بہت بڑی غلطی کرتے ہوئے خطرے کو خود دعوت دے رہی ہے۔عالمی ادارہ صحت نے بھی سویڈن کی حکومت کی جانب سے لاک ڈاؤن نافذ نہ کرنے پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ حکومت کو بھی سنجیدہ ہونا پڑے گا
اور دنیا بھرمیں پھیلی کرونا کی وبا پر قابو پانے کے لیے سخت انتطامات کرناہوں گے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: