سندھ میں ایک اوربڑےسکینڈل کاانکشاف

نیب حکام نے جوڈیشل مجسٹريٹ کی نگرانی میں کندھ کوٹ اور کشمور میں گندم کے گوداموں پر چھاپے مارے ، ڈی ایف سی ریکارڈ کے مطابق 2 لاکھ گندم کی بوریاں غائب پائی گئیں۔ چھاپوں کے دوران ڈی ایف سی ریکارڈ میں 2لاکھ 12ہزار بوریاں موجود تھیں جبکہ گندم کے گوداموں میں صرف 20سے 25 ہزار بوریاں پائی گئیں، یہ گندم کی بوریاں سال 2015-16اور سال 2017-18میں خریدی گئی تھیں۔
ملی بھگت سے گندم غائب کئےجانے کےبعد بچ جانے والی بوریوں میں مٹی بھردی گئی،نیب سکھر نے ملاوٹ شدہ اناج ملنےپرسرکاری گودام سیل کردیئے جبکہ ذمہ دارافسروں کیخلاف بھی کارروائی کاآغازکردیاگیا۔ نیب کے مطابق ملزمان نے قومی خزانے کو ایک ارب روپے سےزائدکا نقصان پہنچایا ۔
واضح رہے کہ ڈی جی نیب سکھر کو 25اپریل کو کھلی کچہری کے دوران شکایت موصول ہوئی تھی کہ کندھ کوٹ اور کشمور میں محکمہ خوراک کے عملداروں نے سرکاری گندم مارکیٹ میں فروخت کر دی ہے جس پر یہ کارروائی عمل میں لائی گئی ۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.