روسں سائبرجنگ کی تیاری میں مصروف؟؟؟

روس میں گزشتہ برس قانون سازی کی گئی تھی کہ روس کے انٹرنیٹ کو خودمختار بنانے کیلئے ناگزیر تکنیکی تبدیلیاں کی جائیں اور ڈیجیٹل اکانومی نیشنل پروگرام نامی قانون کے تحت یکم اپریل کو روس عالمی انٹرنیٹ سے علیحدہ ہوجائےگا جس کے بعد انٹرنیٹ سروس پرووائیڈرز پر لازم ہوگا کہ وہ آزادانہ طریقے سے انٹرنیٹ چلانے کی صلاحیتوں کو بروئے کار لائیں۔
روسی حکام کو اندیشہ ہے کہ چونکہ ویب سائٹس کے تمام تر سرورز بیرون ملک موجود ہیں لہٰذا سائبر حملے کی صورت میں ماسکو کو بڑا نقصان اٹھانا پڑسکتا ہے۔ اس وقت ایک درجن ادارے اور کمپنیاں ڈی این ایس کیلئے روٹ سرور فراہم کر رہی ہیں جن میں سے ایک بھی روس میں موجود نہیں ہے ۔ دوسری جانب ناقدین نے روس کی جانب سے اس اقدام کو سائبر جنگ کی تیاری قرار دے دیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.