متنازع شہریت بل کےخلاف احتجاج شدت اختیار کر گیا

بھارت میں متنازع بل منظور ہونے کے بعد ملک میں جاری مظاہرے پرتشدد ہونے لگے، مشرقی ریاستوں میں کئی ریلوے اسٹیشنوں کو آگ لگا دی گئی پولیس کی براہ راست فائرنگ کے باعث تین افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے،زخمیوں کو ہسپتال منتقل کر دیا گیا جن میں سے بعض کی حالت تشویشناک ہے۔جن علاقوں میں حالات زیادہ کشیدہ ہیں، ان میں منی پور، میگھالیہ اور ناگالینڈ شامل ہیں، ریاست آسام کے شہر گوہاٹی میں غیر معینہ مدت کا کرفیو نافذ کر دیا گیا۔ متعدد پروازیں اور ٹرینوں کی آمد و رفت منسوخ ، یونیورسٹیوں کے امتحانات ملتوی اور بیشتر علاقوں میں انٹرنیٹ سروس بھی معطل کر دی گئی ہے۔بھارت میں قوم پرست جماعت بی جے پی نے شہریت معاملے پر متنازع بل پارلیمان کے دونوں ایوانوں سے منظور کرا لیا ، متنازع بل کو قانونی شکل اختیار دینے کے لیے بھارتی صدر کے رسمی دستخط باقی رہ گئے ہیں جبکہ متنازع بل کو سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا گیا۔ یہ بل یونین مسلم لیگ کی طرف سے چیلنج کیا گیا ہے۔20 کروڑ سے زائد مسلمان شہریوں کو خدشہ ہے کہ متنازع قانون کا اصل ہدف انہیں بنایا جائے گا۔ کیونکہ حکومت کا کہنا ہے کہ نئے قانون کے بعد شہریت رجسٹر کا قانون لایا جائے گا جس کے تحت ہر مسلمان کو یہ ثابت کرنا ہوگا کہ وہ اس ملک کا حقیقی شہری ہے۔
شاید آپ یہ بھی پسند کریں

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.