سعودی عرب میں مقیم تارکین وطن کیلئے بُری خبر

سعودی عرب میں مزید 5 شعبوں میں غیر ملکی تارکین وطن کام نہیں کرسکیں گے۔ وزارت محنت اور سماجی امور کے مطابق ان شعبوں کی مکمل سعودائزیشن کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اور اب طبی آلات، تعمیراتی سامان، گاڑیوں کے پرزہ جات، قالین اور مٹھائیوں کی دکانوں میں غیر ملکی کام نہیں کرسکیں گے۔

اس سے قبل نئے لاگو کردہ قوانین کے مطابق اکتالیس اقسام کی ملازمتوں کو صرف سعودی باشندوں کیلئے مختص کیا گیا اس کے علاوہ مدینہ منورہ میں داخلی کمرشل مارکیٹوں میں بھی صرف سعودی مرد و خواتین ملازمتیں کرسکیں گے۔

سعودی وزیر محنت کے مطابق جو کوئی ادارہ یا آجر اس ضابطے کی خلاف ورزی کا مرتکب پایا گیا ،اس کے خلاف پابندی عائد کردی جائے گی۔ سعودی عرب کی عمومی تنظیم برائے سماجی بیمہ کے مطابق ملک میں 2016ء کے اختتام پرغیرملکی ملازمین کی تعداد چوراسی لاکھ 90 ہزار تھی جو 2017ء میں کم ہوکر اناسی لاکھ 10 ہزار رہ گئی تھی۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.