حکومت کا غریب مٹاؤ پروگرام جاری

پشاور میں نان بائیوں کے ساتھ کامیاب مذاکرات کے بعد صوبائی حکومت نے روٹی کی قیمت بڑھا کر15 روپے کردی، نان بائیوں نے 15 روپے کی روٹی کا وزن 190 گرام رکھنے پر اتفاق کیا ہے۔ ڈپٹی کمشنر پشاور کی سربراہی میں ضلعی انتظامیہ اور نانبائی ایسوسی ایشن کے درمیان مذاکرات ہوئے، مذاکرات میں حیات آباد کے لیے 185گرام روٹی کی قیمت 15 روپے مقرر کرنے پر بھی اتفاق کیا گیا، کامیاب مذاکرات کے بعد تمام تندور کھل گئے،نانبائی ایسوسی ایشن نے روٹی کی قیمت نہ بڑھانے پر ہڑتال کر رکھی تھیادھر آٹے کی قیمت میں اضافے کے بعد لاہور میں بھی نانبائی میدان میں آگئے،،،نانبائیوں نے بڑھتی مہنگائی کا ازخودنوٹس لیتے ہوئے چپاتی کی قیمت 7 سے 15 روپے اور نان کی قیمت 12 روپے سے بڑھا کر 20 روپے کردی۔نان روٹی ایسوسی ایشن کے صدر کا کہنا ہے کہ جی ایس ٹی کے نفاذ سے آٹا مہنگا ہوا ہے، بجلی اور گیس کے نرخ بھی حکومت نے کئی گنا بڑھا دیئے ہیں، ہمیں قیمتیں بڑھانے سے روکا گیا تو تندور بند کر کے سڑکوں پر آجائیں گے۔انہوں نے بتایا کہ ضلعی حکومت نے تین روز کا وقت مانگا ہے۔دوسری جانب صارفین کا کہنا ہے کہ 70سال میں روٹی کی قیمت 6 روپے تک پہنچی جبکہ موجودہ حکومت اسے دوگنا سے بھی زیادہ مہنگا کرنے جارہی ہے،شہریوں نے روٹی اورنان کی قیمت میں اضافے کو ظالمانہ اقدام قراردیا ہےاورحکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ تنورمالکان کو قیمتیں بڑھانے سےبازرکھے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.