بیلاروس،اپوزیشن رہنما ماریا کولسنیکووا قومی سلامتی کی خلاف ورزی مرتکب قرار

0
رپورٹ کے مطابق بیلاروس کے تفتیش کاروں نے باقاعدہ طور پر ماریا کولسنیکووا کو قومی سلامتی کو کمزور کرنے پر فرد جرم عائد کردی ہے۔انوسٹی گیشن کمیٹی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ ماریا کولسنیکووا نے میڈیا اور انٹرنیٹ کا استعمال کرتے ہوئے بیلاروس کی قومی سلامتی کو نقصان پہنچانے والے اقدامات کے لیے عوام کو اکسایا۔
ماریا اس وقت بیلاروس کےدارالحکومت منسک کی جیل میں موجود ہیں جو صدر لوکاشینکو کے خلاف انتخابی دھاندلی کی مہم چلانے والی تین خواتین رہنماؤں میں واحد رہنما ہیں جو ملک چھوڑ کر نہیں گئیں۔رپورٹس کے مطابق 38 سالہ ماریا کولسنیکووا نے گزشتہ روزیوکرین بھیجنے کی کوشش کو پاسپورٹ پھاڑ کر ناکام بنادیا تھا۔7 ستمبر کو ماریا کولسنیکووا کو اس وقت نامعلوم افراد نے اغوا کیا تھا جب وہ منسک میں حکومت مخالف مظاہرے کی قیادت کررہی تھیں۔اپوزیشن رہنما ماریا کولیسنکووا بیلاروس میں طویل عرصے سے حکمرانی کرنے والے لوکاشینکو کے خلاف 9 اگست کو انتخابات سے قبل اتحاد کرنے والی تین خواتین سیاست دانوں میں سے ایک ہیں۔انہوں نے انتخابات کے بعد لوکاشینکو کے خلاف ملک بھر میں شدید احتجاج میں کلیدی کردار ادا کیا،جس کے باعث سیاسی بحران پیدا ہوگیا ہے اور عوام،صدر پر انتخابات میں دھاندلی کے الزامات عائد کررہے ہیں ۔حکومت مخالفین مطالبہ کررہے ہیں کہ دوبارہ انتخابات منعقد کیے جائیں جبکہ اس مطالبے کو مسترد کردیا گیا۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: