معاشی بحران سےلبنانی کرنسی کی قدر میں غیرمعمولی کمی

0
خبر رساں ادارے کے مطابق لبنانی پاؤنڈ کی قدر میں کمی کے بعد لبنان میں ڈالر گراں قدر ہوگیا۔غیر مستحکم کرنسی کی وجہ سے اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اچانک اضافہ ہوگیا، بعض اشیا کی قیمتوں میں تین گنا اضافہ یا اس سے زیادہ ہوگیا ہے اور لوگوں کی بڑی تعداد اس خوف سے چیزیں خریدنے پر مجبور ہوگئی ہے کہ آئندہ چند ہفتوں میں کچھ نہیں ملے گا۔15 سالہ خانہ جنگی،اسرائیل کے حملے اور جنوب اور بیروت پر قبضے کے دوران لبنانیوں نے پانی یا روٹی کے لیے قطاریں لگائیں تھیں لیکن اب وہ ڈالرز کے حصول کے پریشانی کے عالم میں ادھر ادھر بھاگ رہے ہیں۔لبنان میں کرنسی کا بحران قابو سے باہر ہوچکا ہے اور بلیک مارکیٹ میں 9 ہزار لبنانی پاؤنڈ ایک ڈالر کے برابر ہے،اس کا مطلب ہے کہ مقامی کرنسی جو سرکاری طور پر 1997 میں 15 سو امریکی ڈالر کے برابر تھی،ایک سال سے بھی کم عرصے میں اپنی 80 فیصد سے زیادہ قدر کھو چکی ہے۔لبنانی پاؤنڈ میں یہ استحکام بنیادی طور پر ایک پونزی سکیم تھی جو بینکوں اور اشرافیہ کے لیے نفع بخش بنی جبکہ لبنانیوں کو بنیادی اشیا سے ہی دور کردیا۔اس دوران ایک کے بعد دوسری حکومتیں نجی بینکوں سے بڑے پیمانے پر قرض لے کر عوامی قرضوں اور ایندھن جیسی اہم درآمدات کے لیے ادائیگی کرتی رہیں۔حالیہ برسوں میں جب ترسیلات زر اور براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری ڈوبی تو لبنانی پاؤنڈ کی قدر بھی گر گئی۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: