نیب حوالات کیسی ہیں،کیاسہولیات میسرہیں،کیمرےلگےہیں یانہیں

قومی احتساب بیورو کے جاری کردہ اعلامیے کے مطابق چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی ہدایات پر کالم نگار، اینکرز اور رپورٹر حضرات پر مشتمل میڈیا نمائندگان کو نیب لاہور کی حوالات کا مفصل دورہ کروایا گیا۔ نیب حکام نے تمام قیدیوں کو فراہم کی جانے والی سہولیات پر باقاعدہ بریفنگ دی اور اس حوالے سے سوالات پر تسلی بخش جواب دئیے گئے۔ نیب کے موقف کے مطابق ہر ملزم کو قانون کے مطابق جسمانی ریمانڈ حاصل کرنے کے بعد حوالات میں منتقل کیا جاتا ہے جہاں انکی عزتِ نفس کا بھرپور خیال رکھتے ہوئے انہیں دیگر سہولیات فراہم کی جاتی ہیں۔

ڈی جی نیب لاہور کا کہنا تھا کہ نیب کسی دباؤ اور پریشر کی پرواہ کئے بغیر قانون کیمطابق تحقیقات جاری رکھے ہوئے ہے اور نیب عدم تشدد کی پالیسی پر یقین رکھتا ہے۔ نیب کے تمام سیلز میں باقاعدہ روشن دان موجود ہیں جو حوالات میں گھٹن کے حوالے سے کئے جانے والے بے بنیادپراپیگنڈہ کی نفی کرتے ہیں، منظم پراپیگنڈے کا مقصد نیب کی توجہ قانونی کارروائیوں سے ہٹانا ہے۔ واضح رہےکہ سعدرفیق نےنیب سیلزمیں کیمرےنصب ہونےکاانکشاف کیاتھالیکن صحافیوں کوکوئی کیمرہ نظرنہیں آیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.