عمران خان کیساتھ تعلق بھولنےوالا نہیں،دراڑیں ختم ہوجائیں گی،جہانگیرترین

0

جہانگیرترین کا کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان سےبڑا تعلق تھا،ہم نےاکٹھے جدوجہد کی۔ ہمارے تعلق کی گہرائی میں اورعمران خان ہی جانتے ہیں،ان کے تاثرات اور جذبات کی میں قدرکرتا ہوں،ان کا کہنا تھا کہ مجھے یقین بھی ہے شوگرکمیشن رپورٹ کی وجہ سے یہ سارا کچھ ہوا ہے۔شوگرکمیشن رپورٹ صحیح نہیں،عجیب الزامات ہیں،الزامات کا چینی کی قیمت بڑھنے سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ عجیب سی بات ہے چینی کی قیمت بڑھنے پر کمیشن بنا لیکن رپورٹ میں یہ نہیں لکھا کہ چینی کی قیمت کیوں بڑھی؟
جہانگیر ترین کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان میں ہول سیل اورریٹیل سیکٹرریگولیٹ نہیں ہے،مال خریدنے والے ٹیکس میں اپنا نام نہیں دیتے۔ ہرکام میں اچھے کاروباری اورکالی بھیڑیں ہوتی ہیں،ڈبل بکس ہوتی ہونگی،مگرمیرا کاروبار ایسا نہیں ہے،اگرچینی پرشفاف تحقیقات ہوں توسرخرو ہوں گا۔پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ وزیراعظم اپنے جذبات کا مجھ سے بھی اظہار کرچکےہیں۔ انھیں بتایا گیا ہے میں چینی بحران میں شامل تھا لیکن میں تو چینی کی برآمد کے فیصلے میں شامل بھی نہیں تھا۔ چینی کی برآمد کا فیصلہ اسد عمر کی سربراہی میں ہوا تھا۔ پاکستان میں گنے کی قیمت زیادہ ہونے سے چینی مہنگی ہے۔ آٹےاورگندم میں کیا ہوا؟ وہاں تو میرا تعلق ہی نہیں ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اجناس کی قیمتیں طلب اوررسد کی بنیاد پربڑھتی ہیں۔گندم کی زیادہ ذخیرہ اندوزی خود حکومت کر رہی ہے۔مارکیٹ میں گندم ریلیزکریں،مسئلہ حل ہوجائےگا۔حکومت نے 60 لاکھ ٹن گندم ذخیرہ کیوں کی ہے؟
حکومتی طرز عمل پر بات کرتے ہوئے جہانگیر ترین نے کہا کہ یہ بدقسمتی ہے کہ ہمیشہ فیصلہ دیر سے اور ہلکا کرتے ہیں۔ مارکیٹ میں شارٹیج کے تاثر سے چینی مہنگی ہوئی، دراصل حکومت کو طلب اور رسد کو سنبھالنا ہوتا ہے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: