سیکولر بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب

بھارت انسانی حقوق کی پامالی میں سب سے آگے،عالمی تنظیموں کی رپورٹ نے پردہ فاش کر دیا۔ ایشیا گلوبل پالیسی اور یوروایشیا تھنک ٹینک نے کہا ہے کہ بھارت میں سترہ کروڑ مسلمانوں سمیت اقلیتوں پر زندگی اجیرن کردی گئی۔ 2018ء کے دوران کمسن بچیوں اور اقلیتوں سے انسانیت سوز مظالم میں ریکارڈ اضافہ ہوا۔

گزشتہ سال جون میں 8 سالہ مسلمان لڑکی کو ہندوتوا گینگ نے اغوا کیا،معصوم بچی کو جموں کے ہندو مندر میں زیادتی کے بعد قتل کیا گیا۔ یہ انسانیت سوز واقعہ بھارت میں اقلیتوں کےخلاف جرائم کی نئی لہر بن کر ابھر رہا ہے۔

مقبوضہ وادی میں تازہ کارروائیوں کے دوران آج بھی سرچ آپریشن کے نام پر درجنوں کشمیریوں کو گرفتار کرلیا۔ مقبوضہ کشمیر شوپیاں میں انٹرنیٹ اور موبائل سروس بھی بند، شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ مقبوضہ کشمیر کے اسیر شہریوں کیلئےسال 2018 بھی نامہربان رہا، ایک سال میں قابض بھارتی فوج نے حاملہ خواتین، بچوں اور اسکالرز سمیت 355 شہری شہید کردیے

یوورایشیا نے مودی سرکار اور بی جے پی کے عسکری ونگ آرایس ایس پر بھی کڑی تنقید کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی پر عالمی برادری اور تنظیموں سے آواز بلند کرنے کا مطالبہ کیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.