اسرائیل کے ساتھ معاہدہ کسی ملک کے خلاف نہیں،بحرین

0
خبر ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق بحرین کی سرکاری خبر ایجنسی نے کابینہ کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ بحرین، فلسطین اور 2002 کے عرب امن عمل کی مکمل حمایت کرتا ہے۔فلسطین کے حوالے سے اپنا موقف بیان کرتے ہوئے کہا گیا کہ فلسطینیوں کے ساتھ ریاستی سطح پر اسرائیل سے تعلقات اور مشرق وسطیٰ کی 1967 جنگ میں قبضے میں لیے گئے علاقوں سے اسرائیل کی مکمل دستبرداری کی حمایت کرتے ہیں۔فرمان روا حماد بن عیسیٰ الخلیفہ نے کہا کہ ‘تحمل اور اشتراک بحرین کی حقیقی شناخت ہے، امن اور استحکام کی جانب ہمارے اقدامات کسی ملک یا طاقت کے خلاف نہیں ہیں بلکہ یہ ہر کسی کے مفاد میں ہیں اور اچھی ہمسائیگی کی نیت ہے’۔بحرین اور متحدہ عرب امارات نے رواں ماہ اسرائیل سے تعلقات قائم کرنے کے لیے معاہدے پر دستخط کیے تھے اور اسرائیل سے تعلقات قائم کرنے والی اولین عرب ریاستیں بن گئی تھیں۔
دوسری جانب بحرین میں رواں ماہ کے اوائل میں ہوئے معاہدے کے بعد شروع ہونے والا احتجاج شدت سے جاری ہے۔بحرین میں اس سے قبل 2011 میں عرب بہار کے دوران شدید احتجاج کیا گیا تھا تاہم حکومت نے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے تعاون سے اس کو ناکام بنایا تھا۔حکومت نے مظاہرین پر الزام عائد کیا تھا کہ انہیں ایران کا تعاون حاصل ہے جبکہ ایران نے ان الزامات کو مسترد کردیا تھا۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: