لورالائی،کوئلے کی کان میں گیس بھرنے سے دھماکا

دھماکے کی اطلا ع ملتے ہی امدای ٹیمیں اور ریسکیو اہلکارموقع پر پہنچ گئے اور جاں بحق ہونے والے مزدوروں اور زخمی کان کنوں کو باہر نکالا۔ پولیس کے مطابق جاں بحق ہونے والے کان کنوں کا تعلق ایک ہی خاندان سے ہے اور ان میں دو سگے بھائی بھی شامل ہیں،لاشوں اور زخمی کان کن کو ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے جہاں زخمیوں کو طبی امداد دی جارہی ہے ۔

دوسری جانب پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کاکنوں کی ہلاکت پر افسوس کا اظہارکیا،،،ان کا کہناتھا کہ انتظامی نااہلی کاعفریت کان کنوں کونگل رہا ہے لیکن حادثات کی روک تھام کے لیے حکومت کا کوئی اقدام نظر کیوں نہیں آتا اور جاں بحق مزدوروں کے لواحقین کا کوئی پرسان حال نہیں،،،انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ متاثرہ خاندانوں کے لیے معاوضے کا اعلان کیا جائے

اس طرح کے واقعات روز کا معمول بن چکے ہیں،تبدیلی سرکار غریبوں کے حقوق کے دعوے تو بہت کرتی ہے لیکن عملاً کچھ نظرنہیں آتا،،،دکی،چمالنگ، ہرنائی میں مزدوروں کیلئے کوئی طبی سہولت دستیاب نہیں جبکہ مائنز کا دفتر کئی سالوں سے بند ہے اور متعلقہ افسر کوئٹہ میں بیٹھ کر تنخواہیں وصول کررہے ہیں ۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.