شاعر مشرق علامہ ڈاکٹر محمد اقبال کی آج 82 ویں برسی

0

شاعرِ مشرق، مفکرِ اسلام اور مصورِ پاکستان علامہ ڈاکٹر محمد اقبال کی برسی کرونا وائرس کے باعث سادگی کے ساتھ منائی جارہی ہے اور سماجی فاصلے کی ہدایت کے باعث عقیدت مندانِ اقبال اس بار ماضی کی طرح مزارِ اقبال پر اجتماعی حاضری نہیں دے سکے۔شاعر مشرق علامہ محمد اقبال 9 نومبر 1877 کو سیالکوٹ میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم سیالکوٹ میں حاصل کرنے کے بعد مشن ہائی سکول سے میٹرک کیا،مرے کالج سیالکوٹ سے ایف اے اور گورنمنٹ کالج لاہور سے فلسفے میں ایم اے کیا،اس کے بعد آپ اعلیٰ تعلیم کے لیے انگلستان گئے اور قانون کی ڈگری حاصل کی، بعد ازاں آپ جرمنی چلے گئے جہاں سے آپ نے فلسفہ میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔علامہ ڈاکٹر محمد اقبال کا شمار برصغیر کی ان جلیل القدر ہستیوں میں ہوتاہے جنہوں نےخطے کےمسلمانوں کو غلامی کی زنجیروں سے نجات دلانے کیلئے جداگانہ قومیت کا احساس اُجاگر کیا ۔ آپ آزادی وطن کے علمبردار تھے اور سیاسی تحریکوں میں حصہ لیتے تھے، انہوں نے اپنی شاعری سے برصغیر کی مسلم قوم میں بیداری کی نئی روح پھونک دی اور 1930 میں علیحدہ وطن کا خواب دیکھا جسے 1947ء میں تعبیر ملی۔علامہ اقبال اپنے خواب کو حقیقت بنتا نہ دیکھ سکے اور قیام پاکستان سے 9 سال قبل 21 اپریل 1938 کو جہانِ فانی سے کوچ کرگئے اور ان کے جسد خاکی کو لاہور میں بادشاہی مسجد کے سامنے سپرد خاک کیا گیا جبکہ ان کی نمازجنازہ میں 70 ہزار افراد نے شرکت کی ۔علامہ اقبال نے بانگ درا، ضرب کلیم، ارمغان حجاز اور بال جبریل جیسی کتابیں لکھیں۔ اس کے علاوہ سات فارسی شاعری کے مجموعے اور انگریزی میں لکھی آپ کی کتب دنیا بھر میں علم کے پیاسوں کی تسکین کا باعث ہیں۔

 

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: