اورفرازچاہیئں کتنی محبتیں تجھے

احمد فراز12 جنوری 1931ءکو کوہاٹ میں پیدا ہوئے، انکا اصل نام سید احمد شاہ تھا جبکہ احمد فراز ان کا تخلص تھا،احمد فراز نے اردو، فارسی اور انگریزی ادب میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کیں، انہوں نے ریڈیو پاکستان سے اپنی عملی زندگی کا آغاز کیا۔ احمد فراز نے شاعری کا آغاز زمانہ طالبعلمی سے ہی کردیا جبکہ ان کا پہلا شعری مجموعہ ’’تنہا تنہا‘‘ شائع ہوا تو وہ بی اے میں تھے

احمد فرازکے دوسرے مجموعے ’’درد آشوب‘‘ کو پاکستان رائٹرز گڈز کی جانب سے ’’آدم جی ادبی ایوارڈ” سے نوازا گیا،فراز انیس سو چھہتر میں اکادمی ادبیات پاکستان کے پہلے سربراہ مقرر ہوئے تاہم جنرل ضیاء کے دور میں انہیں مجبوراً جلاوطنی اختیار کرنا پڑی۔
احمد فراز کے مجموعہء کلام میں ’تنہا تنہا‘، ’درد آشوب‘، ’نایافت‘، ’شب خون‘، ’مرے خواب ریزہ ریزہ‘، جاناں جاناں‘،’بے آواز گلی کوچوں میں‘،’نابینا شہر میں آئینہ‘، سب آوازیں میری ہیں‘،’پس انداز موسم‘، ’بودلک‘،’غزل بہانہ کروں‘ اور ’اے عشق جنوں پیشہ‘ کے نام شامل ہیں۔

احمد فراز کو “ستارہ امتیاز” ، “ہلال امتیاز” “آدم جی ادبی انعام”، “کمال فن ایوارڈ” سمیت متعدد اعزازات سے نوازا گیا تاہم انہوں نے جنرل پرویز مشرف کی پالیسیوں سے اختلاف کی وجہ سے ہلال امتیاز کا اعزاز واپس کردیا

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.