یورپ کے کئی ملکوں میں 30 سال کی بدترین برفباری

0

یورپی ممالک میں گزشتہ 10 روز سے جاری شدید سردی کی لہر نے نظام زندگی مفلوج کردیا۔۔زمینی اور فضائی رابطے منقطع ہوگئے،ہزاروں پروازیں منسوخ جبکہ ریل کا پہیہ بھی جام ہوگیا ۔ سوئٹزرلینڈ، جرمنی، آسٹریا اور فرانس کے پہاڑی علاقوں میں شدید برفباری کے باعث تودے گرنے کے خطرات بڑھ گئے ہیں
ایلپس پہاڑی سلسلے کے بیشتر حصوں میں بیس سال کے دوران محض دوسری بارخطرے کا لیول انتہائی درجے تک پہنچ گیا بعض علاقوں میں چوبیس گھنٹوں کے دوران دس فٹ تک برفباری ہوئی، خراب موسم کے باعث اسکول بند پڑے ہیں جبکہ دور دراز علاقوں سے زمینی رابطہ ختم ہوگیا ،
گزشتہ روز فرانس میں برفانی تودوں سے بچاؤ کے اقدامات کے دوران دو اہل کار ہلاک ہوگئے تھے جبکہ جرمنی میں ہوٹل پر تودا آگرا تاہم ریسکیو ورکرز نے ہوٹل میں مقیم افراد کو بحفاظت نکالیا۔ سرحدی علاقے برگ ٹیس گارڈن میں نو فٹ تک برف کے انبار لگے ہیں،آج مزید ایک میٹر برفباری متوقع ہے۔
البانیہ میں 2 ہزار کے قریب فوجی اور ریسکیو اہلکار امدادی کاموں میں مصروف ہیں، آسٹریا میں بھی فوجی ہیلی کاپٹر نے 66 افراد کو پہاڑی علاقوں سے ریسکیو کیا۔ یورپ کے کئی ملکوں میں شدید سردی کے باعث اب تک ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد 30 ہوگئی ہے،،،دوسری جانب امریکا میں کی کئی ریاستوں میں برفباری کا 100 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا ہے اور 7 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: