"ہندوستان میں صرف ہندوؤں کی چلے گی اور کسی کی نہیں”

0

بھارتی دارالحکومت دہلی کے شاہین باغ میں شہریت قانون کے خلاف دھرنا دینے والے مظاہرین پر ایک ہندو انتہا پسند نوجوان نے فائرنگ کر دی ،،،اس کا کہنا تھا کہ ہندوستان ایک ہندو ریاست ہے اور یہاں ہندوؤں کےسوا کسی اور کی نہیں چلےگی ۔ پولیس نے نوجوان کو موقع پر ہی گرفتار کرلیا۔
دو روز قبل گوپال نامی ایک ہندو انتہا پسند نے شاہین باغ سےکچھ دوری پر واقع جامعہ ملیہ کے قریب مظاہرہ کرنے والے طلبہ پر ” یہ لو آزادی” کہتے ہوئے فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں ایک طالب علم زخمی ہوگیا تھا۔
اس انتہا پسندی میں اضافہ بھارتی وزیر انوراگ ٹھاکر کے اس بیان کے بعد دیکھنے میں آیا جس میں انہوں نے متنازعہ شہریت بل کے خلاف احتجاج کرنے والوں کو غدار قرار دیتے ہوئے انہیں گولی مارنے کا مشورہ دیا تھا ۔
اس بیان کے جواب میں مسلمان رہنما اسد الدین اویسی نے انوراگ ٹھاکر کے کو مخاطب کرتےہوئےکہاتھا کہ تم کس کس کو گولی مارو گے، تمہاری حکومت کی گولیاں ختم ہوجائیں گی لیکن مسلمان ختم نہیں ہوں گے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: