گوجرانوالہ ڈویژن میں انسانی سمگلنگ کاکاروبارعروج پر

ہتھکڑیوں میں جکڑے ڈی پورٹ ہونے والے نوجوانوں نے غیر قانونی راستے سے ترکی اور یونان جانے کے راستے کو موت کا کھیل قراردیدیا،، ڈی پورٹ ہونے والے نوجوانوں کا کہنا تھا کہ اچھے مستقبل کیلئے گئے تھے لیکن اس راستے پر چلنے کا کوئی فائدہ نہیں،،،کیونہ یہ راستہ بہت خطرناک ہے،،،ترکی کے بارڈر پر فائر لگنےسے بے شمار نوجوان موت کے منہ میں چلیں جاتے ہیں،،،
دوسری جانب ڈپٹی ڈائریکٹرایف آئی اے گوجرانوالہ کا کہنا ہے کہ اس سال تقریبا دوہزار تین سو چورانوے نوجوان غیر قانوی راستوں سے یورپ گئے،،اور وہاں سے ڈی پورٹ ہوکر واپس وطن پہنچے،،،

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.