کراچی پولیس کی سرکاری کالج اساتذہ پر چڑھائی، درجنوں گرفتار

0

سندھ کے سرکاری کالجز کے اساتذہ کراچی پریس کلب پر اپنے مطالبات کے حق میں احتجاج کیا احتجاجی اساتذہ کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت ٹائم پے اسکیل منظور کرے اور کئی سالوں سے ترقیوں کا عمل التوا کا شکار ہے اساتذہ کو میرٹ پر ترقیاں دی جائیں۔
سندھ پروفیسرز لیکچرار ایسوسی ایشن کے پروفیسر منصور انور نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ وزیراعلٰی سندھ مراد علی شاہ سے ملاقات کرائی جائے،اساتذہ کے ایک وفد کی صوبائی وزیر اسماعیل راہو سے ملاقات کرائی گئی تاہم مذاکرات ناکام ہوگئے
احتجاجی اساتذہ نے کراچی پریس کلب سے وزیر اعلی ہاؤس کا رخ کیا تو سندھ پولیس نے اپنائے روایتی ہتھکنڈے گاڑیاں کھڑی کرکے احتجاجی اساتذہ کا راستہ روک لیا، احتجاجی اساتذہ کو منتشر کرنے کے لئے واٹر کینن بھی طلب کرلئے گئے اور جب احتجاجی اساتذہ سی ایم ہاؤس کے قریب پہنچے تو پولیس اور مظاہرین میں ہاتھا پائی شروع ہوگئی۔
احتجاجی اساتذہ اور وزیراعلیٰ ہاؤس کے قریب موجود پولیس کے مابین شدید جھڑپ ہوئی اور اس دوران کئی اساتذہ اور پولیس اہلکار زخمی بھی ہوئے، حالات پر قابو پانے کے لئے پولیس کی مزید نفری طلب کرلی گئی اور پولیس نے درجنوں اساتذہ کو موبائلوں کے ذریعے قریبی تھانوں میں منتقل کر دیا۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: