پیراگون سکینڈل کیس میں خواجہ برادران کو رہائی پاسکیں گے؟

پیرا گون ہاﺅسنگ کیس میں نیب حکام نے خواجہ سعد رفیق اور خواجہ سلمان رفیق کو لاہور کی احتساب عدالت میں پیش کیا۔ دورانِ سماعت عدالت نے دونوں ملزمان کو روسٹرم پر بلا لیا،خواجہ برادران کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ میرے موکلان کے خلاف جو ریفرنس نیب نے پیش کیا اس کی بنیاد غلط ہے، نیب حکام نے ریفرنس حقائق کے برعکس دائر کیا، ایس ای سی پی اور کمپنی ایکٹ کا جائزہ لینے کے بعد ریفرنس فائل نہیں کیا گیا، کمپنی ایکٹ 2017 کے مطابق یہ ریفرنس نیب کے حدود میں نہیں آتا۔
وکیل صفائی نے مزید کہا کہ ریفرنس دائر کرنے کی غلطی نیب سے ہوچکی ہے اور اب وہ غلطی کو چھپا رہے ہیں،قانون اور آئین کے مطابق بات کرنا ہمارا فرض ہے، پراسیکیوشن بھی عدالت کے روبرو قانون و آئین کی بات کرے، فرد جرم عائد کرنا بھی عدالت کا کام ہے اور فرد جرم کو ختم کرنا بھی عدالت کا اختیار ہے۔
احتساب عدالت نے دلائل سننے کے بعد خواجہ سعد رفیق اور خواجہ سلمان رفیق کی بریت کی درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کرلیا،عدالت نے ریمارکس دیئےکہ فرد جرم ختم کرنے کی درخواست پر فیصلہ 2 روز بعد سنایا جائے گا، عدالت نے خواجہ برادران کے جوڈیشل ریمانڈ میں مزید 2 روز کی توسیع کردی اور ملزموں کو 16 اکتوبر کو 12 بجے پیش کرنے کا حکم دیدیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.