وزیراعظم کااستعفیٰ اور90روز میں نئےانتخابات

دھرنا دینے والوں کے خلاف ہی دھرنا،،،،وفاقی حکومت کو اب کیا ہے کرنا،،،یہ تو وقت ہی بتائے گا تاہم جمعیت علمائے اسلام (ف) کے قائد مولانا فضل الرحمان نے اکتوبر میں اسلام آباد لاک ڈاؤن دھرنےکی تیاریاں شروع کردی ہیں۔مولانا فضل الرحمان نےدھرنےکی تاریخ کااعلان کرنےکیلئے18اکتوبر کو مجلس عاملہ کا اجلاس طلب کرلیاجبکہ اسلام آباد دھرنے کے دوران حکومت کےخاتمے،وزیراعظم کےاستعفےاور90دنوں میں نئے انتخابات کے انعقاد کا مطالبہ کیا جائیگا اور حکومت کے خاتمے تک دھرنا جاری رہے گا۔
جمعیت کی مجلسِ عاملہ کی جانب سے صوبہ بھر میں کارکنوں اور عوام کو منظم و متحرک کرنے کے لیے دوروں کا سلسلہ مکمل کرلیاگیا ہے،دھرنے کے انتظامات کے لیے مختلف کمیٹیاں بھی قائم کی گئی ہیں جبکہ اب قائد جمعیت مولانا فضل الرحمان نے دھرنے کی حمایت اور شرکت کی دعوت دینے کےلئے سیاسی جماعتوں کے ساتھ رابطوں کا باضابطہ آغاز کردیا ہے۔مولانا فضل الرحمان نےحکومت مخالف دھرنے کے حوالے سےآفتاب احمد خان شیرپاؤ سے ملاقات کی اس کے علاوہ اے این پی کے سربراہ اسفندیار ولی سے بھی رابطہ کیا جس میں آئندہ کی حکمت عملی پر غورکیا گیا جبکہ محرم الحرام کے بعد بلاول بھٹو، محمود اچکزئی،سراج الحق اور حاصل بزنجو کےساتھ بھی رابطے کا فیصلہ کیا گیا ہے

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.