میزائل تجربہ:دنیا کی 2بڑی طاقتوں نے امریکا کو خبردارکردیا

روس کے نائب وزیر خارجہ سرگئی ریابکوو کاکہنا ہے کہ معاہدے سے دستبرداری کے صرف 2 ہفتے بعد امریکا کی جانب سے میزائل تجربے سے ظاہر ہوتا ہےکہ وہ پہلےہی سےاس منصوبےپرکام کررہا تھا۔انہوں نے کہا کہ امریکا نےعسکری کشیدگی میں اضافے کی جانب قدم بڑھالیا ہے لیکن ہم اشتعال انگیزی پر ردعمل نہیں دیں گےدوسری جانب بیجنگ میں چینی وزارت خارجہ کے ترجمان گینگ شوآنگ نے کہا کہ ’ امریکا کے اس اقدام سے اسلحے کی دوڑ کے ایک نئے مرحلے کا آغاز ہوگا، جس سے ہتھیاروں پر مبنی کشیدگی میں اضافہ ہوگا‘۔انہوں نے کہا کہ ہم نے خبردار کیا تھا کہ میزائل تجربے سے علاقائی اور بین الاقوامی سیکیورٹی صورتحال پر سنگین منفی اثرات مرتب ہوں گے۔امریکا نےگزشتہ روزدرمیانےفاصلےتک مارکرنے والےکروز میزائل کا تجربہ کیا تھا اور یہ تجربہ کیلیفورنیا کے ساحل پر امریکی بحریہ کے زیرِ کنٹرول جزیرے سان نکولس پر کیا گیا تھا جبکہ امریکا کی جانب سے کیا جانے والا تجربہ جوہری صلاحیتوں کے حامل توما ہاک کروز میزائل کا نیا ورژن تھا، جس کا پرانا ورژن آئی این ایف کی توثیق کے بعد سروس سے ہٹادیا گیا تھا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.