لیبیا کو اسلحےکی فروخت،یورپی یونین نے3کمپنیوں پر پابندی لگادی

0
بیلجیئم کے دارالحکومت برسلز میں ہونے والے یورپی یونین کے وزرائے خارجہ کے اجلاس میں طے کیا گیا ہے کہ ان کمپنیوں کے یورپی یونین میں موجود اثاثوں کو منجمند کیا جائے گا، یورپی یونین کی فنانس مارکیٹ سے علیحدہ کیا جائے گا اور ان کو یورپی بلاک میں کسی ملک کے ساتھ کاروبار کرنے سے روکا جائے گا۔یورپی یونین کا کہنا ہے کہ ترک کمپنی اوراسیا شپنگ کے ایک جہاز کا نام سرکن ہے جس نے مئی اور جون میں ہتھیاروں پر پابندی کے باوجود لیبیا کے لیے فوجی سازو سامان پہنچایا۔ یورپی یونین کے بیان کے مطابق یہ نئی فہرستیں یورپی یونین کی پابندیوں کے لیے حکمت عملی کو ظاہر کرتی ہیں اور ماضی اور حال کے قصورواروں کو مزید کسی خلاف ورزی سے روکتی ہیں۔
دوسری جانب ترک وزارت خارجہ نے یورپین یونین کے اس فیصلے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب مشرقی بحیرہ روم میں کشیدگی کو کم کرنے کے لیے کوشش کی جارہی ہے، ایسے غلط فیصلے کرنا مناسب نہیں ہے۔ اگر یورپی یونین خطے میں سکیورٹی اور استحکام چاہتی ہے تو اسے اپنے متعصبانہ رویے کو بدلنا ہوگا اور ترکی کے ساتھ بات چیت کرنا ہوگی۔لیبیا میں نیشنل اکارڈ کی حکومت کو ترکی اور قطر کی حمایت حاصل ہے جبکہ جنرل ہفتر کو یو اے ای، فرانس، مصر اور روس کی حمایت حاصل ہے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: