غیرتو غیراپنے بھی تبدیلی سرکار سے نالاں

وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت گزشتہ روز وفاقی کابینہ کے اجلاس میں حج پالیسی 2019کی منظوری دی گئی تاہم اس منظوری پر وفاقی وزیر مذہبی امور نورالحق قادری خوش نہ تھے ۔ کیونکہ انہوں نے فی حاجی 45ہزار روپے سبسڈی دینے کی تجویز دی تھی، ان کا موقف تھا کہ سعودی عرب میں ٹیکسز اورڈالرکی قدرمیں اضافے کابوجھ عازمین پرڈالاگیا،پیکج کے علاوہ 20ہزارروپے قربانی کیلئے ساتھ لےجانا ہوں گے اس کےعلاوہ فی حاجی کو2 ہزار ریال بھی ساتھ لےجانا لازم ہوگادوسری جانب وزیرخزانہ سمیت بعض وفاقی وزراء نے حج پیکج پر سبسڈی دینےکی مخالفت کی جس پر وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نورالحق قادری بھی اپنی تجویز پرڈٹ گئےاورعازمین کو سبسڈی نہ دینے پر سیکرٹری مذہبی امور کے ہمراہ اجلاس سے اٹھ کر چلے گئے ۔ پروگرام کے تحت وفاقی وزیر مذہبی امور نے وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد حج پالیسی پر میڈیا کو بریفنگ دینا تھی تاہم انہوں نے طے شدہ نیوز کانفرنس بھی منسوخ کردی اس طرح پہلی بار حج پالیسی پر وزیر مذہبی امور کے بجائے وزیر اطلاعات نے بریفنگ دی ہے

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.