شہباز شریف کاآٹے کے بحران پر فوری انکوائری کا مطالبہ

0
شہباز شریف کی جانب سے جاری بیان میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ جب ملک میں کمی تھی تو گندم اور آٹا ملک سے باہر کیوں بھیجا گیا؟ قوم کو بتایا جائے کہ کس کے حکم پر اور کس قیمت پر گندم اور آٹا برآمد ہوا؟ عوام کو معلوم ہونا چاہیے کہ ملک وقوم کا نقصان کرکے کس نے فائدہ اٹھایا؟
قائد حزب اختلاف نے سوال اٹھا کہ 16 ماہ میں گندم کے ذخائر کہاں گئے؟ ذخائر کم تھے تو برآمد کرنے کا فیصلہ کیوں ہوا؟ سولہ ماہ میں ہر چیز کے تباہ ہونے کی وجوہات کا پتا لگانا ہوگا۔ انہوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ صورتحال کی تنزلی کا یہی عالم رہا تو تین ماہ بعد کا سوچ کر خوف آ رہا ہے۔ حکمران 2020ء کو بہتری جبکہ معاشی ماہرین معاشی تباہی کا سال قرار دے رہے ہیں۔
شہباز شریف کامزید کہنا تھا کہ قوم کی چیخیں نکلوانے کے باوجود مزید اربوں روپے کے مزید ٹیکس کی بازگشت قیامت در قیامت ہے۔ مزید ٹیکس لگانے سے معیشت کی رہی سہی سانس بھی بند ہو جائے گی۔ لیگی صدر نے کہا کہ ملک میں اصلاحات کے نام پر حماقتوں کا بازار گرم ہے۔ اگر عمران صاحب لاعلم ہیں تو نالائق اور اگر ان کی مرضی سے ہو رہا ہے تو پھر وہ کرپٹ عناصر کے سرغنہ ہیں۔ معاشی ماہرین کے تجزیات درست ہیں تو آنے والا وقت قوم کی چیخوں کو آسمان پر پہنچا دے گا۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: