سندھ حکومت بلدیاتی نظام پربھی کنٹرول کرنے کی خواہاں

پیپلزپارٹی شہری علاقوں میں بھی بلدیاتی نظام پر اپنا کنٹرول چاہتی ہے جس کیلئے سندھ حکومت نے لوکل گورنمنٹ ایکٹ میں ترمیم کا فیصلہ کیا ہے،،،منتخب میئر،ڈسڑکٹ چیئرمینوں کو ہٹانے کیلئے قانون میں ترمیم کی جائے گی
سندھ لوکل گورنمنٹ ایکٹ میں ترامیم کا مسودہ آئندہ کابینہ اجلاس میں پیش کیا جائے گا۔مجوزہ ترمیم کے تحت سادہ اکثریت سے منتخب بلدیاتی چیئرمینوں، وائس چیئرمینوں، میئر اور ڈپٹی میئرکو ہٹایا جا سکے گا
کراچی اور حیدر آباد میں بلدیاتی نظام متحدہ قومی موومنٹ کے ہاتھ میں ہے، میئر کو اختیارات دینے کیلئے صوبائی حکومت کو سیاسی اور عدالتی سطح پر شدید دباؤ کا سامنا ہے، وسیم اختر کئی بار پیپلزپارٹی کی جانب سے فنڈز کی عدم دستیابی کی شکایت بھی کرچکے ہیں۔
اس سے قبل منتخب بلدیاتی میئرز اور ڈسڑکٹ چیئرمینز کو ہٹانے کے لیے دو تہائی اکثریت درکار ہوتی تھی۔ مجوزہ ترمیم کی منظوری کی صورت میں سندھ کے کئی اضلاع میں پاکستان پیپلز پارٹی کے مخالف بلدیاتی نمائندوں کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائی جا سکے گی

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.