سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت

0

چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کی نئی جے آئی ٹی کو کام کی اجازت دینے کیلئے عوامی تحریک اور دیگر کی درخواستوں کی سماعت کی۔ سپریم کورٹ نے لاہور ہائی کورٹ کو حکم دیا کہ تین ماہ میں جے آئی ٹی کیخلاف درخواستوں پر فیصلہ سنایا جائے اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ اس حوالے سے بینچ تشکیل دیں۔
چیف جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیے کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن میں لوگ جاں بحق بھی ہوئے اور زخمی بھی، سانحہ کا فیصلہ ہر صورت ہونا چاہیے۔ عوامی تحریک اور پنجاب حکومت نے جے آئی ٹی کو کام سے روکنے کیخلاف اپیلیں دائر کی تھیں۔ عوامی تحریک کے وکیل نے درخواست میں کہا کہ جے آئی ٹی کو کام سے روکنے کا فیصلہ بدنیتی پر مبنی ہے، ہائی کورٹ نے سپریم کورٹ کے حکم میں مداخلت کی ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ سپریم کورٹ کو اس معاملے میں نہ گھسیٹیں۔
پولیس افسران کے وکیل نے کہا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کا ایک مقدمہ سرکار نے بنایا دوسرا عوامی تحریک نے، ٹرائل کے دوران تحقیقات نہیں ہو سکتیں۔ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیے کہ پنجاب حکومت نے سپریم کورٹ میں نئی جے آئی ٹی بنانے کی یقین دہانی کرائی تھی، نئی جے آئی ٹی نہ بنتی تو صوبائی حکومت توہین عدالت کی مرتکب ہوتی، پولیس افسران نوٹس کے باوجود پیش ہوئے نہ جے آئی ٹی کی مخالفت کی۔
دسمبر 2018 کو پنجاب حکومت نے ماڈل ٹاؤن کیس کی ازسرنو تحقیقات کیلئے نئی جے آئی ٹی تشکیل دی تھی۔ لیکن گزشتہ سال لاہور ہائی کورٹ نے حکم امتناع جاری کرتے ہوئے سانحہ ماڈل ٹاؤن کی نئی جے آئی ٹی کو کام کرنے سے روک دیا تھا۔ 7 جون 2014 کو لاہور انتظامیہ اور پولیس نے ماڈل ٹاؤن کے علاقے میں تجاوزات ہٹانے کے لیے آپریشن کیا تھا، مزاحمت پر پولیس نے ان پر گولی چلادی جس سے 14 افراد جاں بحق اور90 سے زائد زخمی ہوگئے تھے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: