داؤپر لگ گیا مودی راج،،،اب کیا کرو گے مہاراج

مقبوضہ کشمیرکی خصوصی حیثیت ختم کیےجانےکےبعد وادی میں کرفیو کے باعث لاک ڈاؤن برقرار ہے لیکن 6 روز سے گھروں میں محصور کشمیری عوام بالآخر قابض فوج کی تمام پابندیوں کو ٹھوکر مارتے ہوئے گھروں سے نکل آئے اوربھارت کی طرف سےخصوصی حیثیت ختم کیےجانےپر شدید احتجاج کیااور وادی کی خصوصی حیثیت بحال کرنے کا مطالبہ کیا۔
کارگل میں قابض فوجیوں کی بڑی تعداد نےبپھرےکمشیریوں کو روکنےکی کوشش کی لیکن انہیں شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا اور بہادر کشمیریوں نے دشمن کےبزدل فوجیوں کو بھاگنے پرمجبور کردیا،،،بعدازاں بھارتی فورسز کی جانب سے نہتے کشمیریوں پر پیلٹ گن اور ربڑ کی گولیوں کا استعمال کیا جس سے 50 سے زائد شہری زخمی ہوگئے جبکہ بھارتی فوجیوں نےدرجنوں شہریوں کوگرفتارکرلیا ۔
دوسری طرف بزرگ حریت رہنما سیّد علی گیلانی اور میر واعظ عمر فاروق سمیت دو درجن سے زائد حریت رہنماؤں کو سرینگر سے جیل آگرہ جیل منتقل کردیا گیا ۔ حریت رہنماؤں کو آگرہ جیل خصوصی جہاز کے ذریعے منتقل کیا گیا۔ادھرمقبوضہ وادی میں سخت ترین کرفیو نافذ ہے اور بھارتی فوج کے ہزاروں اہلکارسڑکوں پرگشت کررہےہیں جبکہ وادی کی طرف آنے والے راستوں کو خار دار تاریں لگا کر بند کررکھا ہے، جموں، کٹھوعہ، سامبا، پونچھ، ڈوڈا، ادھمپور سمیت دیگر علاقوں میں زیادہ سختی ہے۔ شہریوں کو باہر آنے سے منع کیا جا رہا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.