جنت نظیروادی کو جہنم بنے201 واں روز

0

مقبوضہ کشمیرمیں مسلسل 201 روز سےجاری بد ترین کرفیونے مقبوضہ وادی کو چھاؤنی بنا رکھا ہے۔ وادی میں سکول، کالجز، دفاتر اور تجارتی مراکز بھی بند ہیں، انٹرنیٹ اور موبائل فون سروس بھی تاحال معطل ہے۔ کشمیریوں کو کھانے پینے کی اشیا کی شدید قلت کا سامنا ہے ،،علاج معالجے کے لیے ادویات تک میسر نہیں ہیں ۔
مقبوضہ کشمیر میں بنیادی انسانی حقوق کی پامالی عروج پر ہے اور قابض فورسز گھر گھر چھاپے مارکر بے گناہ کشمیریوں کو گرفتار کر رہی ہے۔5 اگست سے جاری کرفیو اور پابندیوں کے دوران بھارتی فوج خواتین سمیت درجنوں کشمیریوں کو شہید کرچکی ہے۔ قابض،ظالم فوج کے ساتھ جھڑپوں میں متعدد کشمیری زخمی ہوئے،سینکڑوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔
نہتے کشیریوں پر ظلم کی انتہا نے قابض سیکیورٹی فورس اہلکار کا ضمیر جگا دیا،، مقبوضہ وادی کے ضلع کٹھوعہ میں تعینات ایک اور بھارتی فوجی کی خودکشی کر لی۔۔ساتھی اہلکاروں کے مطابق بھارتی اہلکارشدید دباؤ کا شکار تھا۔جنوری 2007سے اب تک مقبوضہ وادی میں خود کشی کرنے والے بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی تعداد 447 تک جا پہنچی ہے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: