بھارتی سپریم کورٹ کا بابری مسجد کیس کافیصلہ 9ماہ میں سنانے کا حکم

بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد کیس کی سماعت کرنے والے سپیشل جج سے کہا ہے کہ کیس کا فیصلہ ہرصورت میں 9 ماہ کے اندر سنایا جائے۔سپریم کورٹ نےکیس کی سماعت کرتے ہوئے ہدایت کی کہ بابری مسجد کے مقدمہ میں 6 ماہ کے اندر گواہوں کے بیانات درج ہوجانے چاہئیں جبکہ 9 ماہ کے اندر ہر صورت میں فیصلہ سنا دیا جائے۔
سپریم کورٹ نے معاملے کی سماعت کرنے والے مرکزی تفتیشی بیورو کے خصوصی جج ایس کے یادو کی مدت ملازمت میں بھی توسیع کی ہدایت کی ہے۔عدالت نے اتر پردیش کی حکومت سے کہا ہے کہ وہ فوری مدت ملازمت میں توسیع کرے تاکہ کیس کی سماعت پر کوئی اثر نہ پڑے اوریہ التواء کا شکار نہ ہو۔سپیشل جج ایس کے یادو 30 ستمبر کو ریٹائر ہونے والے ہیں۔
27سال قبل انتہا پسند ہندوؤں نے تاریخی بابری مسجد پرحملہ کر کے اسے شہید کردیا تھا،بابری مسجد کیس میں بی جے پی کے رہنما ایل کے ایڈوانی، مرلی منوہر جوشی، اُوما بھارتی، کلیان سنگھ اور دیگر ملزم نامزد ہیں۔انتہاپسند ہندوؤں کا دعویٰ ہے کہ بابری مسجد سے پہلے یہاں رام مندر تھا،اوراب مسجد کوشہید کرکے اس کی جگہ رام مندر تعمیر کیاجائے گا

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.