آصف زرداری نے زندگی میں تیسری بار گرفتاری کامنہ دیکھا

0

اپنی 64ویں سالگرہ سے 46دن قبل گرفتار ہونے والے آصف زرداری کےقانون کی گرفت میں آنے کایہ تیسراواقعہ ہے، پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین آصف زرداری پہلی مرتبہ 28برس 10 ماہ قبل 10اکتوبر1990 بروز بدھ کو گرفتار کئے گئے، اس وقت سابق صدرکی عمر 35برس تھی۔سی آئی اے پولیس نے ایف آئی اے کے دفتر کے قریب سے انھیں گرفتار کیا تھا، گرفتاری صدر تھانہ میں درج دفعہ 365 اے،395 اور 109 کے مقدمے میں عمل میں لائی گئی۔آصف زرداری کی پہلی جیل کی اسیری 27ماہ چھ دن پر محیط رہی، وہ چھ فروری 1993 کو جسٹس ریٹائرڈ فخرالدین شیخ پر مشتمل انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت سے ضمانت پر رہا ہوئے ۔ساڑھے 37سالہ آصف زرداری اس وقت سول ہسپتال کراچی میں زیرعلاج تھے۔مفاہمت کےبادشاہ آصف زرداری دوسری مرتبہ اس وقت گرفتار ہوئےجب ان کی اہلیہ بینظیر بھٹو کی دوسری منتخب حکومت 4 نومبر1996 کو برطرف ہوئی ،حکومت کےبرطرف ہوتےساتھ ہی 41سالہ آصف زرداری بھی گرفتار کرلیے گئے۔سابق صدر کی اسیری کا یہ وقت کافی طویل رہا،وہ 2967دن تک پابندسلاسل رہے۔22نومبر2004 کو49سالہ آصف زرداری اپنے آخری مقدمے میں سپریم کورٹ سے ضمانت منظور ہونے کے بعد رہا ہوئے تھے۔آصف زرداری پر مجموعی طور پر 14مقدمے قائم تھے جن میں سےوہ 4کیسوں میں بری ہوئےاور باقی میں انکی ضمانت منظور ہوئی ۔رہائی کےوقت وہ علالت کے سبب ضیاالدین ہسپتال میں زیرعلاج تھے ،سپرنٹنڈنٹ جیل نے ریلیز آرڈرہسپتال کی انتظامیہ کے حوالے کیے تھے۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: