اسلام آباداحتساب عدالت:اسحاق ڈارکیخلاف اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت

اسحاق ڈار کے خلاف اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت اسلام آبادکی احتساب عدالت میں ہوئی،پاناما جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء بطور گواہ عدالت میں پیش ہوئے اوراپنابیان ریکارڈ کروایا۔واجد ضیاء نے بتایا کہ جے آئی ٹی نے تمام افراد کے بیانات ریکارڈ کیے، صدر نیشنل بینک سعید احمدکا بیان بھی ریکارڈ کیا،واجدضیاء کےمطابق نیب ،ایف آئی اے ،ایف بی آر اور دیگر اداروں سے ریکارڈ اکٹھا کیاگیا، سعید احمد نے اپنے نام پر مختلف بینک اکاؤنٹس کی تردید کی جبکہ غیر ملکی بینک میں اکاؤنٹ کا اعتراف کیا، یہ بینک اکاؤنٹ اسحاق ڈار کی ہدایت پر کھولا گیاتھا
واجد ضیاء نے عدالت کو مزید بتایاکہ بینک اکاؤنٹ کا مقصد قرض حاصل کرنا ،کاروبار کوسہولت دینا تھا،جےآئی ٹی نے اسحاق ڈار کا بیان بھی قلمبند کیا، 1992سے2008 کےدوران اسحاق ڈآر کے اثاثوں میں91فیصد اضافہ ہوا، واجد ضیاء کےمطابق اسحاق ڈار اپنے اثاثوں سے متعلق کوئی وضاحت نہ دے سکےعدالت نے اسحاق ڈار کیس میں لائی گئی جے آئی ٹی رپورٹس واپس بھجوا دیں،واجد ضیاء کے بیان پرجرح آئندہ سماعت پر ہوگی،احتساب عدالت نے سماعت8مئی تک ملتوی کردی۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.