اسلاموفوبیا میں مبتلا فرانس کا ایک اورسنگین اقدام

فرانس مسلمان خواتین کے پردے پر پابندی سے متعلق اقدامات میں مزید ایک قدم آگے بڑھ گیا،،،فرنچ سینیٹ نے بچوں کو سکول لانے والی ماؤں کے سکارف پہننے پر بھی پابندی کا قانون منظور کر لیا۔ فرانس کی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں میں مسترد ہونے والے بل کو سینیٹ نے 186 ووٹوں سے پاس کیا ۔ بل کی مخالفت میں 100 ووٹ پڑے جبکہ ایک سو انسٹھ اراکین نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔ بچوں کو سکول چھوڑنے کے لیے آنے والی خواتین کے سکارف پر پابندی سے متعلق بل اسلام مخالف ریپبلکنز پارٹی نے پیش کیا۔
ریپبلکنز پارٹی کے سینیٹر جیکلین سٹیچ برینیو کا کہنا ہے کہ موجودہ ترمیم پہلے سے موجود نقاب پر پابندی کے قانون میں موجود سقم کو دور کرنے میں مددگار ثابت ہو گی۔ادھرفرانس حکومت نے خود کو اس بل سے علیحدہ رکھتے ہوئے امید ظاہر کی ہے کہ قومی اسمبلی میں اپنے ممبران کی مدد سے اس بل کو مسترد کرا دیں گے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.